دودھ کی فراہمی کو کھونے کے بغیر دودھ پلانے کے دوران وزن کم کرنے کا طریقہ
Share on facebook
Facebook
Share on twitter
Twitter
Share on whatsapp
WhatsApp
Share on telegram
Telegram
Share on email
Email

آج کی ہماری پوسٹ اُن عورتوں کے لیے ہے جو بچے کی پیدائش کے بعد اپنا وزن کم کرنا چاہتی ہیں آج کی پوسٹ میں آپ کو ایک ویٹ پلان اور ایک ویٹ لاس لیکوئیڈ اور کچھ ضروری ٹپس بتاؤ گا جن کا استعمال کر کے آپ نہ صرف اپنا ویٹ کم کر سکیں گی۔ بلکہ آپکے بچے کی صحت اور دودھ پلانے کی صلاحیت پر بھی کوئی اثر نہ ہوگا۔

سب سے پہلے آپ اپنے وزن کی پیمائش کس طرح کرنی ہے۔ سب سے پہلے پریگنسینسی قائم ہونے سے پہلے آپ کا ویٹ کتنا تھا ۔ اور ڈیلیوری کے چھ ماہ بعد آپ کا ویٹ کتناہے۔اس کے درمیان جو عرصہ آتا ہے۔ مثلاًپریگنسینسی کے نو ماہ بعد اور ڈیلیوری کے بعد کے چھ ماہ ان پندرہ ماہ میں اپنے ویٹ کو مت کاؤنٹ کریں۔ کیونکہ اس دوران ویٹ کم زیادہ ہونا معمول کی بات ہے۔ اگر آپ کو لگتا ہے کہ ڈیلیوری تک آپ کا ویٹ کافی بڑھ چکا ہے۔ تو یہ بھی ذہن میں رکھیں کہ ڈیلیوری کے وقت اگر آپ کا بچہ تین سے چار کلو کا ہے۔ اور پلس ایک کلو ایمنایوٹک فلوئیڈملا کر پانچ کلو گرام توہسپتال میں ہی پانچ کلو کم ہو جائے گااور اگلے ایک ہفتے میں ایک سے ڈیڑھ کلو گرام مزید فلوئیڈ بہنے سے کم ہونگے۔ تو اس طرح چھ سے سات کلو گرام آپ پہلے ہی ہفتے میں کم کر لیں گی۔ لیکن اگر آپ پھر بھی سمجھتی ہیں کہ نو مہینوں میں ویٹ کچھ زیادہ ہی بڑھ گیا ہے۔ اور اگلے چھ مہینوں میں کم ہونے والا نہیں اور آپ بچے کو دودھ بھی پلاتی ہیں تو کم از کم دو مہینوں تک ایسا کوئی اقدام نہ کریں جو ویٹ کم کرنے کی پلاننگ میں آتا ہوں پہلے اپنے آپ کو ریکور ہونے دیں۔

وزن کم کرنا مطلب کیلوریزبرن کرنا ہے تو اگر آپ بچے کو دودھ پلاتی ہیں تو سمجھ لیں تین سو سے پانچ سو کیلوریز پر ڈے دودھ کی وجہ سے برن ہو رہی ہوتی ہیں۔ مزید آپ کو پانچ سو کیلوریز ڈائٹ پلان کے ذریعے کم کرنے ضرورت ہوتی ہے۔ ٹوٹل اگر آپ پر ڈے تین ہزار کیلوریز لیتی ہیں تو ان میں سے ایک ہزار نفی کر دیں۔ بس —-اس سے زیادہ کم نہیں کر سکتی۔ایک ہزار کیلوریز کم کرکے چھ سو گرام سے آٹھ سو گرام پر ویک ویٹ کم کر سکیں گی۔ جس کا آپ پر اور آپ کے بچے پر کوئی اثر نہیں ہوگا۔ ہاں اگر اس سے زیادہ کم کرتی ہیں تو وہ نقصان دہ ہے۔ تو اب ہمیں کیا کرنا ہے۔ ہمیشہ ویٹ کم کرنے کے لئے کھائیں نہ کہ ویٹ بڑھانے کے لئے بچے کی دیکھ بھال میں مصروف مائیں اکثر وقت پر کھانا بھول جاتی ہیں۔ ایسا نہ کریں۔ جو کھانے صحیح اوقات ہیں۔ جیسے ناشتہ، دوپہر کا کھانا۔ اور شام کا کھانا۔ انہیں مت بھولیں۔ چاہے نہ کھایا جائے۔ تھوڑا کھا لیں لیکن ضرور کھائیں کھانے میں چکنائی کا کم سے کم استعمال کریں عام بناسپتی گھی کی بجائے کوشش کریں کہ دیسی دگھی مل جائے۔

اسے بھی کم مقدار میں استعمال کریں۔ سرخ سبزیاں جیسے گاجر اور چقندر وغیرہ کا استعمال زیادہ سے زیادہ کریں۔ یہ آپ کے دودھ میں بھی اضافہ کرے گا۔ اگر دودھ لینا چاہتی ہیں۔ تو بغیر بالائی کے استعمال کریں اور ضروری نہیں ہے کہ دودھ کی روانی کو بڑھانے کے لئے آپ گلاس بھر بھر کے دودھ پئیں۔ بس مناسب مقدار میں استعمال کریں میں آپکو وہ غذائیں ویسے ہی آپ نوٹ کر لے جن سے دودھ وافر مقدار میں آئے گا۔ انڈے، بادام، مچھلی، مالٹے، گاجر، براؤن رائس، دلیہ، کھوپرا، پالک اور میتھی دانہ۔ یہ غذائیں آپ کو مو ٹاپے سے دور رکھیں گی۔ اس کے بعد دو سے تین انچ کا ٹکڑا دار چینی لیں۔ اسے چھ گلاس پانی میں ڈالیں۔ اور مزید اس میں تین عدد لانگ اور آدھی چمچ سونف ڈال دیں۔ اسے ابال دیں اور چھان کر روم ٹمپریچر میں رکھ دیں جب بھی پیاس لگے یہ پانی استعمال کرنا ہے۔ عام پانی نہیں پینا اگر شوگر وغیرہ کا کوئی پرابلم نہیں ہے تو ذائقہ تبدیل کرنے کے لئے شہد ملا سکتے ہیں۔ مزید اگر کڑواہٹ کا احساس زیادہ ہو تو پانچ چھ گلاس کے بجائے آٹھ دس گلاس پانی میں ابال لیں۔ لیکن پانی یہی پیئں۔ اگر ہو سکے تو نیم گرم استعمال کریں۔

اب باری آتی ہے ایکسر سائز کی تو کوئی بھی ہارڈ ایکسر سائز مت کریں۔ تھوڑی تیز چہل قدمی ضرور کریں۔ اگر گھر کے نزدیک کوئی پارک وغیرہ ہے تو بچے کو سٹالر میں ڈالیں اور بچے کو بھی سیر کروائیں ساتھ میں خود اسے پُش کریں۔ آپکو نارمل سے ضروری ٹپس بتا دئیے ہیں۔ اگر آپ ان کو اختیار کر لیتی ہیں۔ تو جیسے میں نے پہلے بتایا تھا کہ ڈیلیوری کے چھ مہینوں بعد ویٹ چیک کرنا چاہیے تو مجھے یقین ہے۔ چھ مہینوں بعد بھی آپکا ویٹ وہی ہو گا جو پندرہ مہینے پہلے تھا۔

یہ تھا طریقہ وزن کم کرنے کا میں امید کرتا ہوں آپ کو ہماری یہ پوسٹ اچھی لگی ہو گی اگر اچھی لگی ہیں تو نیچے کمنٹ کر کے ضرور بتائے ااور ہماری پوسٹ کو اپنے دوستوں کے ساتھ بھی ضرور شیئر کریں مزید ایسی پوسٹ کے لیے ہماری ویب کو وزٹ کرتے رہیں۔

شکریہ۔

Share on facebook
Facebook
Share on twitter
Twitter
Share on whatsapp
WhatsApp
Share on telegram
Telegram
Share on email
Email

Leave a Comment